دفترخارجہ

سمجھوتہ ایکسپریس کے ملزمان کی بریت پر پاکستان کا احتجاج؛ بھارتی ہائی کمشنر دفتر خارجہ طلب

اسلام آباد: 

پاکستان نے بھارتی ہائی کمشنر اجے بساریہ کو دفترخارجہ طلب کرکے سمجھوتہ ایکسپریس کے ملزمان کی بریت کے خلاف شدید احتجاج کیا ہے۔

دفترخارجہ کی جانب سے جاری ہونے والے بیان کے مطابق بھارتی ہائی کمشنر اجے بساریہ کو دفترخارجہ طلب کرکے سمجھوتہ ایکسپریس کے ملزمان کی بریت پر شدید احتجاج کیا گیا ہے، دفترخارجہ نے سمجھوتہ ایکسپریس پردہشت گرد حملے کے 4 ملزمان چھوڑنے کی مذمت بھی کی۔

ترجمان کے مطابق بھارتی ہائی کمشنر سے کہا گیا ہے کہ سمجھوتہ ایکسپریس پر ہونے والی دہشتگردی کی سنگین واردات میں 44 بے گناہ پاکستانی شہید ہوئے، پاکستان سمجھوتہ ایکسپریس پر پیش رفت نہ ہونے کا معاملا مسلسل اٹھاتا رہا اور  پیش رفت نہ ہونے کا معاملا ہارٹ آف ایشیا 2016  اجلاس کی سائیڈ لائن سمیت بار بار اٹھایا گیا۔

ترجمان نے کہا کہ بھارتی عدالت نے سرغنہ سوامی اسمانند سمیت ہندو انتہاپسند تنظیم آر ایس ایس کے ملزمان کو چھوڑا، سانحے کے11 سال  بعد ملزمان کی بریت انصاف کے ساتھ مذاق ہے، جس سے بھارتی عدلیہ کی ساکھ بے نقاب ہوگئی۔

واضح رہے کہ  پاکستان اور بھارت کے درمیان چلنے والی سمجھوتا ایکسپریس پر 18 فروری 2007 پر دھماکا خیز مواد سے حملہ کیا گیا تھا، حملے میں 68 مسافر ہلاک ہوگئے تھے جن میں زیادہ تر پاکستانی مسافر تھے۔ اس کیس میں 290 افراد نے گواہی دی تھی، جب کہ بھارت میں نیشنل انویسٹی گیشن کی عدالت نے سمجھوتہ ایکسپریس دھماکے کے  مرکزی ملزمان اسیم آنند سمیت لوکیش شرما، کمل چوہان اور رجیندر چوہدری کو بری کردیا۔

باپ اور ننھی بیٹی کی محبت ماں سے برداشت نہیں ہوئی، بیٹی کو قتل کردیا

یہ بھی پڑھیں

لندن کے گریٹ آرمنڈ اسپتال میں کامیاب آپریشن

لندن کے گریٹ آرمنڈ اسپتال میں کامیاب آپریشن

لندن: اس آپریشن کی سیریز میں مجموعی طور پر 55 گھنٹے کا دورانیہ صرف ہوا …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے