پوپ فرانسس کے قریبی دوست بچوں پر جنسی زیادتی کے مجرم قرار

پوپ فرانسس کے قریبی دوست بچوں پر جنسی زیادتی کے مجرم قرار

ویٹی کن سٹی: رومن کیتھولک مسیحیوں کے روحانی پیشوا پوپ فرانسس کے قریبی دوست 77 سالہ جارج پال کو بچوں پر جنسی زیادتی کا مجرم قرار دے دیا گیا۔

غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق آسٹریلیا کی خصوصی عدالت نے ویٹی کن کے خزانچی رہنے والے اور پوپ فرانسس کے قریبی ساتھی 77 سالہ جارج پال کو مجرم قرار دے دیا۔

 انہیں دسمبر 2018 میں جیوری کی جانب سے مجرم قرار دیا گیا تھا تاہم جارج پال کے خلاف عدالتی کارروائی اور انہیں بچوں پر جنسی زیادتی کا مجرم قرار دئیے جانے کا عدالتی فیصلہ خفیہ رکھا گیا تھا۔

رپورٹ کے مطابق اب تک کی عدالتی کارروائی میں جارج پال کو سزا نہیں سنائی گئی ہے تاہم انہیں سزا سنانے کی عدالتی کارروائی کا آغاز 26 فروری سے کردیا جائے گا۔

جارج پال کے خلاف آج سے تیسرے ٹرائل کا آغاز ہوگا، پہلے دو ٹرائلز میں ان کے خلاف تفتیش کا آغاز کرنے اور انہیں مجرم قرار دئیے جانے کی کارروائی ہوئی۔

77 سالہ پادری جارج پال نے اپنے خلاف لگے الزامات مسترد کردئیے ہیں، انہیں آسٹریلیا کے بااثر پادری کا درجہ حاصل ہے جبکہ وہ ویٹی کن کے بھی اعلیٰ عہدیداروں میں شامل رہے ہیں۔

واضح رہے کہ چند روز قبل پوپ فرانسس کا کہنا تھا کہ بچوں کو جنسی تشدد کا نشانہ بنانے والے پادریوں کے خلاف کارروائی کا وقت آن پہنچا ہے، پوری دنیا کی نگاہیں ہماری طرف امید سے دیکھ رہی ہیں اور اب مجرموں کے خلاف ٹھوس اقدامات کیے جائیں گے۔

پوپ فرانسس نے رواں ماہ کے آغاز میں مشرق وسطیٰ کے دورے پر اعتراف کیا تھا کہ چرچز کے پادری بچوں اور خواتین کو جنسی زیادتی اور تشدد کا نشانہ بنانے سمیت انہیں جنسی غلام بنائے رکھنے میں ملوث رہے ہیں۔

بریگزٹ کو موخر کرنے کا انکشاف

یہ بھی پڑھیں

بھارتی سپریم کورٹ کا بابری مسجد شہادت کیس کا فیصلہ 9 ماہ میں سنانے کا حکم

بھارتی سپریم کورٹ کا بابری مسجد شہادت کیس کا فیصلہ 9 ماہ میں سنانے کا حکم

نئی دلی: بھارتی سپریم کورٹ نے سینٹرل بیورو آف انویسٹی گیشن کورٹ کو تاریخی بابری …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے