پیپلز پارٹی, نے, قومی اسمبلی میں, احتجاج کیا

پیپلز پارٹی نے قومی اسمبلی میں احتجاج کیا

اسلام آباد: پیپلزپارٹی خورشید شاہ کا کہنا تھا کہ جمہوریت کے لیے پیپلز پارٹی نے عوام کے ساتھ مل کر جدوجہد کی

عوام سے ووٹ لے کر آنے والوں کے لیے ہمارے دل میں احترام ہے، اسپیکر کی کرسی پر چاہے کوئی بھی بیٹھا ہو ہمارے لئے قابل احترام ہے، اسپیکر کا ایک آئینی کردار ہوتا ہے، منتخب ایوان کے اسپیکر کو گھسیٹ کر آپ کیا ثابت کرنا چاہتے ہیں۔
ہو سکتا ہے آغا سراج درانی کسی چیز میں ملوث ہو لیکن یہ رویہ قابل قبول نہیں، سندھ پاکستان کا اہم صوبہ ہے، کسی اور کا کبھی احتساب نہیں ہوتا، یہ بدبختی سیاستدانوں کی ہے کہ یہ سب کوچور اچکے نظر آتے ہیں، یہ ملک ہمیں سولی پر چڑھانے کے لیے بنا ہے، اسپیکرخود کمزور ہوگا تواسمبلی کیسے چلے گی۔
سیاست دان ایک دوسرے کو چور کہیں گے تو عوام کیا کہیں گے، ہم ایک دوسرے کے لیے ہی مصیبت بنے ہوئے ہیں، جس ملک کا سربراہ یہ کہے کہ یہ نیا پاکستان ہے اور نئے پاکستان کا کارنامہ ہے کہ اسپیکر کو گھسیٹو۔ ملک کے سربراہ کو ایک ایک بیان سوچ کر دینا چاہیے، وزیراعظم نے یہ بیان کیوں دیا کہ نئے پاکستان میں دہشت گردی نہیں ہوگی، کیا پہلے دہشت گردی خود کروائی جا رہی تھی۔
خورشید شاہ کے اظہار خیال کے بعد پیپلز پارٹی، مسلم لیگ (ن) اور ایم ایم اے کے ارکان اسپیکر سندھ اسمبلی کی گرفتاری کےخلاف نشستوں سے کھڑے ہوگئے۔

یہ بھی پڑھیں

پاکستان، افغانستان میں ہونے والے حالیہ دہشت گردی بے بنیاد الزامات مسترد

پاکستان، افغانستان میں ہونے والے حالیہ دہشت گردی بے بنیاد الزامات مسترد

اسلام آباد: این ڈی ایس کی جانب سے ایک بیان میں دعویٰ کیا گیا تھا …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے