سانحہ, آرمی پبلک, اسکول, ازخود نوٹس کی, سماعت

سانحہ آرمی پبلک اسکول ازخود نوٹس کی سماعت

اسلام آباد: چیف جسٹس میاں ثاقب نثار کی سربراہی میں بینچ نے سانحہ آرمی پبلک اسکول ازخود نوٹس کی سماعت کی، اس دوران ایڈووکیٹ جنرل خیبرپختونخوا عدالت میں پیش ہوئے

سماعت کے آغاز پر چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ ہم نے کمیشن بنایا تھا، کیا اس نے رپورٹ جمع کرادی ہے؟
اس پر ایڈووکیٹ جنرل خیبرپختونخوا نے بتایا کہ 147 گواہوں کے بیانات قلمبند ہوچکے ہیں جبکہ 109 کے بیانات قلمبند ہونا ابھی باقی ہیں، جب تک یہ بیانات مکمل قلمبند نہیں ہوتے رپورٹ جمع نہیں کرواسکتے۔
جس پر عدالت نے حکم دیا کہ ٹھیک ہے ہم اس معاملے کو نمٹا دیتے ہیں، جب رپورٹ مکمل ہوجائے تو سپریم کورٹ میں جمع کروائی جائے۔
گزشتہ دنوں سپریم کورٹ کی جانب سے تشکیل دیے گئے کمیشن نے سابق کور کمانڈر پشاور جنرل ریٹائرڈ ہدایت الرحمٰن، سابق آئی جی خیبر پختونخوا ناصر خان درانی سمیت اہم عسکری اور پولیس افسران کو طلب کیا تھا۔
سانحہ اے پی ایس میں شہید طلبا کے والدین کی درخواست اور شکایت کنندگان کے ازالے کے لیے چیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے اس معاملے پر ازخود نوٹس لیا تھا۔
بعد ازاں 5 اکتوبر 2018 کو چیف جسٹس میاں ثاقب نثار کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے بینچ نے پشاور ہائیکورٹ کے جسٹس پر مشتمل ایک تحقیقاتی کمیشن تشکیل دینے کا حکم دیا تھا۔
جس کے بعد 14 اکتوبر 2018 کو پشاور ہائیکورٹ کے چیف جسٹس نے عدالت عظمیٰ کی ہدایات پر جسٹس محمد ابراہیم کی سربراہی میں سانحہ اے پی ایس کی تحقیقات کے لیے عدالتی کمیشن تشکیل دے دیا تھا۔

یہ بھی پڑھیں

پہلی بارچین, سے حاصل کیے جانے والے, تمام اقسام کے, قرضوں کی, تفصیل جاری

پہلی بارچین سے حاصل کیے جانے والے تمام اقسام کے قرضوں کی تفصیل جاری

اسلام آباد: سرکاری دستاویزات میں پاکستان نے آئی ایم ایف کے دباؤ کی وجہ سے …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے