سابق سینیٹر فیصل رضا عابدی, پر, فرد جرم, عائد

سابق سینیٹر فیصل رضا عابدی پر فرد جرم عائد

اسلام آباد: وفاقی دارالحکومت کی عدالت کے جج شاہ رخ ارجمند نے چیف جسٹس کے خلاف اشتعال انگیز انٹرویو سے متعلق کیس کی سماعت کی، اس دوران ملزم کو عدالت کے رو برو پیش کیا گیا

اس موقع پر فیصل رضا عابدی پر فرد جرم عائد کی گئی، تاہم ملزم نے صحت جرم سے انکار کردیا۔
دوران سماعت سابق سینیٹر کے وکیل نے استدعا کی کہ فیصل رضا عابدی کی طبیعت ناساز ہے، انہیں ہسپتال منتقل کیا جائے، جس پر عدالت نے فیصل رضا عابدی کا دوبارہ طبی معائندہ کرانے کا حکم دے دیا۔
عدالت نے ریمارکس دیے کہ ضرورت پیش آنے کے بعد ہسپتال منتقلی کا فیصلہ کیا جائے گا۔
بعد ازاں عدالت نے کیس کی آئندہ سماعت پر استغاثہ کے گواہ پولیس اہلکار شبیر تنولی، مدعی شوکت عباسی اور شہری راجا ایاز عباسی کو پیش کرنے کا حکم دے دیا۔
سینیٹر فیصل رضا عابدی نے توہین عدالت کیس میں عدالت سے معافی مانگ لی۔
عدالت عظمیٰ میں معافی نامہ سپریم کورٹ میں وکیل کے توسط سے جمع کرایا گیا، جس میں فیصل رضا عابدی نے کہا کہ میں خود کو عدالت کے رحم و کرم پر چھوڑتا ہوں۔
معافی نامے میں کہا گیا کہ میں فیصل رضا عابدی عدالت سے معافی مانگتا ہوں اور مستقبل میں احتیاط کروں گا، میں نے اڈیالہ جیل سے بذریعہ ڈاک معافی نامہ سپریم کورٹ بھیجوایا تھا لیکن وہ واپس کر دیا گیا، اس لیے دوبارہ معافی نامہ بذریعہ درخواست جمع کروا رہا ہوں۔
سپریم کورٹ میں جمع کرائے گئے معافی نامے میں کہا گیا کہ کسی بھی ریاست کا شہری اس وقت تک مہذب شہری نہیں کہلواتا جب تک وہ عدالت کا احترام نہ کرے، آئین کے آرٹیکل 5 کے تحت اداروں کے ساتھ وفاداری اور ان اداروں کی عزت کرنا ہر شہری کی ذمہ داری ہے۔
فیصل رضا عابدی نے عدالت عظمیٰ سے استدعا کی کہ ان کا معافی نامہ قبول کیا جائے۔

یہ بھی پڑھیں

صدر مملکت نے چاروں گورنر اورعلماء کی ویڈیو کانفر نس آج

صدر مملکت نے چاروں گورنر اورعلماء کی ویڈیو کانفر نس آج

اسلام آباد: حکومت نے مساجد کیلئے ایس اوپیز کا از سرنو جائزہ لینے کا فیصلہ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے