مولانا سمیع الحق, کے قتل, کا مقدمہ, نامعلوم, ملزمان کے,خلاف درج

مولانا سمیع الحق کے قتل کا مقدمہ نامعلوم ملزمان کےخلاف درج

اسلام آباد: مولانا سمیع الحق کے بیٹے حامد الحق نے ‘ایف آئی آر’ میں تفصیلات بتاتے ہوئے کہا ہے کہ ان کے والد پر بحریہ ٹاؤن سفاری ولاز راولپنڈی میں شام کو 6 بج کر35 منٹ پر حملہ ہوا

ایف آئی آر کے متن کے مطابق مولانا حامدالحق نے کہا کہ مولانا سمیع الحق چارسدہ اور تنگی میں جلسے کے بعد آئے تھے اور اسلام آباد میں آسیہ بی بی کیس کے فیصلے کے خلاف مظاہرے میں شرکت کے لیے آبپارہ جانا چاہتے تھے، لیکن وہ سڑک بند ہونے اور طبیعت کی خرابی کے باعث وہاں نہیں جاسکے۔
ان کا کہنا تھا کہ ان کے سیکریٹری سید احمد شاہ نے مولانا سمیع الحق پر حملے کی اطلاع دی۔
ایف آئی آر میں کہا گیا ہے کہ مولانا سمیع الحق کے پیٹ، دل، ماتھے، بازو، گال اور کان پر چھریوں کے 10 سے 12 وار کیے گئے۔
مولانا حامدالحق نے ایف آئی آر میں درج کیا ہے کہ وہ اپنے والد کا پوسٹ مارٹم نہیں کروانا چاہتے ہیں۔
نوشہرہ میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے مولانا حامد الحق کا کہنا تھا کہ تفتیشی افسران قتل کے محرکات تلاش کررہے ہیں۔
ان کا کہنا تھا کہ مولانا سمیع الحق خطے اور ملک میں امن کے داعی تھے اور ان کے قتل پر صوبوں کے وزرائے اعلیٰ، وفاقی وزرا اور دینی جماعتوں کے سربراہان نے اظہار تعزیت کیا ہے۔
مولانا سمیع الحق کو گزشتہ روز راولپنڈی میں ان کے گھر میں چھریوں کے وار سے قتل کیا گیا تھا۔
مولانا حامد الحق نے ابتدائی طور پر کہا تھا کہ ان کے محافظ اور ڈرائیور نے بتایا کہ وہ کچھ وقت کے لیے انہیں کمرے میں اکیلا چھوڑ کر باہر گئے تھے اور جب وہ واپس آئے تو انہیں شدید زخمی حالت میں پایا۔
مولانا سمیع الحق کو زخمی حالت میں قریبی ڈسٹرکٹ ہیڈکوارٹر ہسپتال منتقل کیا گیا تھا لیکن وہ ہسپتال پہنچنے سے قبل راستے میں ہی زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے دم توڑ گئے تھے۔

یہ بھی پڑھیں

سندھ طاس معاہدہ ختم, کرنے کی, دھمکی دی ,جو سنگین, غلطی ہوگی

سندھ طاس معاہدہ ختم کرنے کی دھمکی دی جو سنگین غلطی ہوگی

اسلام آباد: وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی نے سیکرٹری جنرل اقوام متحدہ کوپلوامہ حملے کے بعد …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے