ٹریفک چالان کے خلاف احتجاجاً خود سوزی کرنے والا رکشہ ڈرائیور دم توڑ گیا

کراچی:پولیس ترجمان کے مطابق 20 اکتوبر کو ٹریفک چالان کے خلاف احتجاجاً خود سوزی کرنے والا رکشہ ڈرائیور محمد خالد ولد محمد یوسف ہسپتال میں دم توڑ گیا

رکشہ ڈرائیور سے مبینہ رشوت مانگنے والے ٹریفک پولیس اہلکار کے خلاف مقدمہ درج کرکے اسے گرفتار کرلیا گیا
20 اکتوبر کو صدر تھانے کی حدود میں شارع فیصل پر ٹریفک پولیس اہلکار کی جانب سے غلط چالان کرنے اور مبینہ طور پر رشوت طلب کرنے پر خالد نامی رکشہ ڈرائیور نے کراچی پوسٹ آفس کے قریب واقع ٹریفک پولیس کی چوکی کے سامنے خود پر پیٹرول چھڑک کر آگ لگالی تھی۔
خود سوزی سے قبل رکشہ ڈرائیور نے سوشل میڈیا پر ایک پیغام میں کہا تھا کہ ٹریفک پولیس کے اے ایس آئی محمد حنیف ان سے روزانہ کی بنیاد پر 100 روپے وصول کرتے ہیں۔
خالد نے انکشاف کیا تھا کہ اس روز بھی انہوں نے ٹریفک پولیس کے اے ایس آئی کو 50 روپے دیئے لیکن وہ 100 روپے دینے پر اصرار کرتے رہے اور جب انہوں نے 100 روپے دینے سے انکار کیا تو انہیں دفتر سے چالان تھما دیا گیا۔

یہ بھی پڑھیں

لی مارکیٹ میں عوام کیلئے سہولیات سے لیس نئے بیت الخلا قائم

لی مارکیٹ میں عوام کیلئے سہولیات سے لیس نئے بیت الخلا قائم

کراچی: بیت الخلا دو خواتین کے لیے اور دو مردوں کے لیے پاکستان کے پہلے …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے