بلوچستان, صنعتی یا کاروباری مرکز نہیں یہاں, اخبارات کا واحد ذریعہ آمدن, سرکاری اشتہارات

بلوچستان صنعتی یا کاروباری مرکز نہیں یہاں اخبارات کا واحد ذریعہ آمدن سرکاری اشتہارات

 بلوچستان: اس سیریز میں آپ روزانہ میڈیا کے کسی ایک شعبے سے متعلق فرد کو سینسر شپ کے حوالے سے درپیش مسائل کے بارے میں جا سکیں گے

ملکی حالات کے پیش نظر اخباری مالکان اور دیگر کارکنوں نے خود پر سیلف سنسر شپ بھی مسلط کر رکھی ہے تاکہ وہ سکیورٹی کے مسائل کی زد میں نہ آئیں۔ ہر طرف سے جو سکیورٹی کے مسائل ہیں۔ مثلاً ادھر وار لارڈ بھی ہوتے ہیں، ادھر شدت پسندی بھی ہے، ادھر گینگ وار بھی ہے، ادھر ادارے بھی ہیں۔ تو اس سے وہ بچنے کے لیے ڈر ڈر کر اپنا کام چلا رہے ہیں۔
دباؤ ہر طرف سے ہے۔ جو غیر ریاستی عناصر ہیں وہ چاہتے ہیں کہ ان کی مرضی کی خبریں شائع ہوں کیونکہ وہ آپس میں مد مقابل ہیں۔ تو ادارے چاہتے ہیں کہ ان کی خبریں شائع نہ ہوں اور صرف حکومتی نکتہ نظر شائع ہو۔ تو اس طرح کا دباؤ چلا آ رہا ہے خاص طور پر 2006 کے بعد دباؤ بڑھا ہے۔
یہاں پر نیوز ایجنسیوں سے سیٹلائٹ فون پر رابطہ کیا جاتا ہے اور انہیں اپنی خبریں، دھمکیاں اور نکتہ نظر دیا جاتا ہے۔ ان نیوز ایجنسیوں کے ذریعے ان کا نکتہ نظر اخبارات کو پہنچتا ہے۔ لیکن جب سے نیشنل ایکشن پلان آیا ہے اور عدالت نے اس کے تحت فیصلے دیے ہیں، تو اب اخبارات ان شدت پسندوں کا نکتہ نظر شائع نہیں کر رہے۔
اب یکطرفہ، یعنی صرف سرکاری نکتہ نظر چھپتا ہے۔ تو اب آپ یوں سمجھ لیں کہ بلوچستان کے اخبار سرکاری خبرنامہ ہیں۔ یعنی جو صوبائی یا وفاقی حکومت کی سرگرمیاں ہوتی ہیں ان کے ہینڈ آؤٹ بن گئے ہیں۔ اس کے علاوہ بین الاقومی خبریں دے دیتے ہیں۔ عوامی امنگوں کے مطابق خبریں اب ہمارے اخباروں میں موجود نہیں ہیں۔
ریاستی دباؤ اشتہارات کی شکل میں آتا ہے۔ بلوچستان صنعتی یا کاروباری مرکز نہیں ہے۔ یہاں اخبارات کا واحد ذریعہ آمدن سرکاری اشتہارات ہیں۔ تو اس لیے وہ (اخبار مالکان اور ایڈیٹرز) مجبور ہیں کہ وہ سرکاری اشتہارات پر انحصار کریں کیونکہ ان اشتہارات پر ہی ان (اخبارات) کی زندگی کا دار و مدار ہے۔ تو اخبارات کی زندگی اور نبض سرکار کے ہاتھ میں ہے۔
بلوچستان میں سماجی ارتقا جبراً روک دیا گیا ہے۔ صحافت بھی اسی سماجی ارتقا کا حصہ ہے۔ تو بجائے اس کے کہ یہ ترقی کرے، وہ بھی پیچھے کی طرف سفر کر رہی ہے۔ آزادی کا تو کوئی تصور ہی نہیں ہے۔
اس دباؤ اور سنسر شپ کو ڈیل کرنے کے بہت سے طریقے ہیں۔ پاکستان میں غیر جمہوری ادوار بہت مرتبہ آئے ہیں۔ اس دوران ان حکومتوں نے ایک طریقہ سیکھا ہے اور وہ ہے سرکاری اشتہارات کا۔ یہ لوگ سرکاری اشتہارات کو سنسر شپ کے ایک ہتھیار کے طور پر استعمال کرتے ہیں۔
بلوچستان ایک پسماندہ صوبہ ہے اور یہاں کوئی کاروبار یا صنعت وغیرہ نہیں ہے۔ تو حکومتیں سرکاری اشتہارات کو ہتھیار کے طور پر استعمال کرتے ہوئے اپنی مرضی کی خبریں چھپواتی ہیں یا رکواتی ہیں۔
اس صورتحال میں مشکل یہ ہے کہ ان یکطرفہ خبروں کی وجہ سے شدت پسند صحافیوں کے خلاف کارروائیاں کرتے ہیں۔ سب سے زیادہ صحافی بلوچستان میں قتل ہوئے ہیں۔ آج تک ان واقعات کی تفتیش نہیں ہوئی اور یہ معلوم نہیں ہو سکا کہ انہیں کس نے قتل کروایا۔ صحافی یہاں پر بے یارو مددگار ہیں اور اخبارات خوف کے ماحول میں کام کر رہے ہیں۔
وار لارڈز نے کئی دفعہ اخبارات کی ترسیل بند کی ہے۔ وہ بسوں کو اخبارات اٹھانے سے منع کر دیتے ہیں اور ایجنٹس کو کہہ دیتے ہیں کہ وہ اخبارات کو تقسیم نہ کریں۔ غیر ریاستی عناصر نے بھی اخبارات کا بائیکاٹ کیا جس کا مطلب یہ ہے کہ ان کے زیر اثر علاقوں میں اخبار نہیں جا سکتے۔ یہی صورتحال ریاستی اداروں کی ہے۔ اخبارات کے ساتھ ریاستی اور غیر ریاستی اداروں کا رویہ ایک سا ہے، یعنی دھمکی دھونس اور جبر
ضیا الحق کے دور میں چونکہ مارشل لا نافذ تھا تو باقاعدہ سنسر شپ نافذ تھی۔ اب جو بھی ہے وہ غیر اعلانیہ ہے۔ اب ایڈوائسز کے ذریعے کام چلایا جاتا ہے۔ ایک ہدایت آتی ہے یا حکم آتا ہے اور اس کے تحت اخبارات اپنی پالیسی بناتے ہیں۔ اسے سیلف سنسرشپ بھی کہہ سکتے ہیں جو اخبارات خود اپنے اوپر لاگو کرتے ہیں۔ یہ ذرا مختلف طریقہ کار ہے مارشل لا سے۔
بلوچستان میں مجموعی طور پر صحافت جانِ بلب ہے۔ یعنی آئی سی یو میں ہے۔ اور انہیں بچانے والے ڈاکٹر کام نہیں کر رہے جو کہ حکومت ہے۔ حکومت اور اس کے اداروں کا صحافت کو بچانے یا اس کی ترویج میں کوئی کردار نہیں ہے۔ اور وہ جو سرکاری اشتہارات ہوتے ہیں اس کی ترسیل کا کام کرتے ہیں۔ حکومت کا کوئی اور کردار نہیں ہے۔
ان حالات میں بلوچستان کے اخبارات میں عوام کی امنگوں کی کوئی ترجمانی نہیں ہے۔ اور عوام بھی ریاستی امور سے لا تعلق ہیں (جن کے بارے میں خبریں چھپتی ہیں)۔ عوام ریاست سے، اس کے اداروں سے اور صحافت سے بھی لاتعلق ہیں اور ایک بہت ہی گہری مایوسی کا شکار ہیں۔

یہ بھی پڑھیں

خضدار میں قبائلی رہنما نواب امان اللہ کے قافلے پر حملہ

خضدار میں قبائلی رہنما نواب امان اللہ کے قافلے پر حملہ

کوئٹہ: مسلح افراد نے قافلے پر فائرنگ کی جس سے امان اللہ اور ان کے …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے