انسانیت سوز, سلوک کی, شفاف, تحقیقات کا, مطالبہ
Myanmar's State Counsellor Aung San Suu Kyi, left, follows Japanese Prime Minister Shinzo Abe after their joint press remarks following their bilateral meeting at the Akasaka Palace state guest house in Tokyo Tuesday, Oct. 9, 2018. (Toshifumi Kitamura/Pool Photo via AP)

انسانیت سوز سلوک کی شفاف تحقیقات کا مطالبہ

ٹوکیو: میانمار کی رہنما آنگ سان سوچی نے روہنگیا مسلمانوں کی نسل کشی کی تحقیقات کرانے کا جاپانی وزیراعظم کا مطالبہ تسلیم کرلیا

جاپانی وزیراعظم شنزو آبے اور میانمار کی رہنما آنگ سانگ سوچی کے درمیان ٹوکیو میں اہم ملاقات ہوئی۔ دونوں رہنماؤں نے دوطرفہ باہمی دلچسپی کے امور پر تعاون کو مزید مستحکم بنانے کی ضرورت پر زور دیا۔
جاپانی وزیراعظم نے روہنگیا مسلمانوں پر میانمار کی فوج اور انتہا پسند بدھسٹ کے مظالم کا معاملہ اُٹھاتے ہوئے انسانیت سوز سلوک کی شفاف تحقیقات کا مطالبہ بھی کیا۔
کہ روہنگیا مسلمانوں کے قتل عام سے میانمار حکومت پرعدم اعتماد میں اضافہ ہوا ہے جسے دور کرنے کے لیے مثبت اقدامات اُٹھانے کی اشد ضرورت ہے۔
جاپانی وزیراعظم شنزو ابے نے پناہ گزینوں کی حالت زار پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ بنگلہ دیش میں موجود روہنگیا پناہ گزینوں کی باعزت واپسی اور آباد کاری کے لیے جاپان ہر قسم کا تعاون کرے گا۔
جاپانی وزیراعظم کے مطالبے پر آنگ سان سوچی نے متاثرین کو انصاف کی فراہمی کی یقین دہانی کراتے ہوئے کہا کہ ہماری انویسٹی گیشن اتھارٹی بااختیار اور طاقت ور ہے جو ذمہ داروں کے خلاف قانون کے مطابق کارروائی کرنے کی مکمل اہلیت رکھتی ہے۔
میانمار کی رہنما آنگ سانگ سوچی نے روہنگیا پناہ گزینوں کی بحالی اور آباد کاری کے لیے جاپانی وزیراعظم شنزو ابے کے دلی جذبات کی قدر کرتے ہوئے شکریہ ادا کیا اور اس حوالے سے مشاورت کی یقین دہانی بھی کرائی۔

یہ بھی پڑھیں

نائب افغان صدر کے قافلے پر بم حملہ ہوا جس کے نتیجے میں 10 افراد ہلاک

نائب افغان صدر کے قافلے پر بم حملہ ہوا جس کے نتیجے میں 10 افراد ہلاک

کابل: آج صبح افغانستان کے دارالحکومت کابل میں سڑک کنارے بم دھماکے کے نتیجے میں …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے