,لندن ,تو ,کیا ,دنیا ,میں, کہیں, بھی, میری ,کوئی, جائیداد ,نہیں , اسحٰق ڈار

لندن تو کیا دنیا میں کہیں بھی میری کوئی جائیداد نہیں , اسحٰق ڈار

پاکستان مسلم لیگ (ن) کے سینئر رہنما اور سابق وزیر خزانہ اسحٰق ڈار کا کہنا ہے کہ پاکستان سے باہرلندن تو کیا دنیا میں کہیں بھی میری کوئی جائیداد نہیں۔

سابق وزیر خزانہ اسحٰق ڈار نے لندن میں صحافیوں سے غیر رسمی گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ لندن میں میرے 2 فلیٹس کا دعویٰ جھوٹا ہے۔

اسحٰق ڈار کا کہنا تھا کہ لندن میں جائیداد سے متعلق یہ الزامات میرے خلاف چلائی گئی منفی مہم کاحصہ ہیں۔

انہوں نے کہا کہ وزیرمملکت شہزاد اکبر کے الزامات حقائق کے منافی ہیں اگر وہ سچے ہیں تو فلیٹس کی تفصیلات منظرعام پر لائیں۔

اسحٰق ڈار کا کہنا تھا کہ اصل مسائل سے عوام کی توجہ ہٹانے کے لیے الزامات لگائے جارہے ہیں، انہوں نے مزید کہا کہ پی ٹی آئی کی حکومت انتقامی کارروائیوں کے لیے نیب کو استعمال کر رہی ہے۔

خیال رہے کہ چند روز قبل نجی ٹی وی سے گفتگو میں اسحٰق ڈار نے آمدن سے زائد اثاثے بنانے اور ٹیکس بچانے کے الزامات کو ایک مرتبہ پھر مسترد کرتے ہوئے کہا تھا کہ بیماری کی وجہ سے لندن میں موجود ہوں، صحت ٹھیک ہوتے ہی وطن واپس لوٹ آؤں گا۔

جلال آباد میں قونصل خانہ کل سے دوبارہ کام شروع کردے گا، دفترخاجہ

انہوں نے کہا تھا کہ مجھ پر ٹیکس بچانے کے حوالے سے لگایا گیا الزام بے بنیاد ہے، میری کوئی فیکٹریاں نہیں چلتیں جس کے لیے ٹیکس بچاؤں۔

اپنے اثاثوں کی نیلامی پر مسلم لیگ (ن) کے سینئر رہنما نے پرویز مشرف کا نام لیے بغیر کہا تھا کہ ایک آمر کے گھر کو ڈی سیل کیا جا رہا ہے اور میرے اثاثے نیلام کیے جا رہے ہیں لیکن یہ جو کرنا ہے کر لیں، میری جائیدادیں اللہ کی امانت ہیں۔

واضح رہے کہ 2 اکتوبر کو اسلام آباد کی احتساب عدالت نے اسحٰق ڈار کے اثاثے نیلام کرنے کا حکم دیا تھا

احتساب عدالت کے جج محمد بشیر نے اپنے فیصلے میں کہا تھا کہ صوبائی حکومت کو یہ اختیار ہے کہ وہ اسحٰق ڈار کی جائیداد کو نیلام کرے یا اپنے پاس رکھے۔

اس سے قبل قومی احتساب بیورو (نیب) کی جانب سے اسحٰق ڈار کی جائیداد کو نیلام کرنے سے متعلق احتساب عدالت میں ایک درخواست دائر کی گئی تھی۔

درخواست میں نیب نے موقف اختیار کیا تھا کہ جائیداد قرق کرنے کے 6 ماہ بعد تک ملزم عدالت سے رجوع کر سکتا ہے، تاہم ملزم کی جانب سے ابھی تک کوئی اعتراض نہیں کیا گیا لہٰذا ان کی جائیداد نیلام کر کے رقم قومی خزانے میں جمع کروائی جائے گی۔

یہ بھی پڑھیں

ہم مولانا فضل الرحمان کی گزشتہ پارلیمان کی تقریروں کی روشنی میں آگے بڑھ رہے ہیں

ہم مولانا فضل الرحمان کی گزشتہ پارلیمان کی تقریروں کی روشنی میں آگے بڑھ رہے ہیں

سیالکوٹ: پارلیمان اس وقت تک جعلی نہیں ہو سکتی جب تک مولانا فضل الرحمان کے …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے