کراچی، اخبارات میں اشتہارات شائع کرانے سے 2 گمشدہ بچے بازیاب

کراچی سمیت سندھ بھر سے لاپتہ 22 بچوں کے اشتہارات اخبارات میں شائع کرانے سے دو گمشدہ بچے مل گئے، جنہیں والدین کے حوالے کردیا گیا۔ ایڈیشنل انسپکٹر جنرل (اے آئی جی) کراچی ڈاکٹر امیر شیخ کے مطابق کراچی پولیس اور روشنی ہیلپ لائن کی جانب سے 24 ستمبر کو 22 گمشدہ بچوں کی تصاویر اور تفصیلات کے اشتہارات اردو، سندھی اور انگریزی اخبارات میں شائع کرائے گئے تھے۔ اس کوشش سے کراچی میں گھر سے بھاگنے والا 10 سالہ سجاد فیصل آباد سے مل گیا، جسے پنجاب چائلڈ پروٹیکشن یونٹ کے عملے نے سندھ پولیس کے حوالے کیا، جبکہ دوسری 4 سالہ بچی ام فروا کراچی سے ملی ہے۔ دونوں بچوں کو پولیس نے قانونی کاروائی کے بعد ان کے والدین کے حوالے کردیا ہے۔ ایڈیشنل آئی جی کراچی کے مطابق گزشتہ ہفتوں میں کراچی سے لاپتہ ہونے والے بیشتر بچے بھی مل چکے ہیں۔

روشنی ہیلپ لائن کے صدر محمد علی کے مطابق اخبارات میں تصاویر کے ساتھ جن بچوں کے اشتہارات شائع ہوئے، وہ سال 2017ء سے لاپتہ ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ دسمبر 2017ء میں سندھ ہائیکورٹ میں پیش کی گئی 36 لاپتہ بچوں کی فہرست میں سے 16 بچے اب تک مل چکے ہیں۔ محمد علی کے مطابق 2017ء میں لاپتہ باقی بچوں کی تصاویر پر مشتمل اشتہارات حال ہی میں شائع کرائے گئے۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے بتایا کہ ان اشتہارات سے یہ تاثر ہرگز نہیں ملنا چاہیئے کہ یہ بچے حال ہی میں لاپتہ ہوئے۔ بچوں کے لاپتہ ہونے کے حوالے سے کیسز کے فوکل پرسن ڈی آئی جی سی آئی اے امین یوسفزئی نے کہا کہ یہ تاثر بھی قطعی طور پر غلط ہے کہ کراچی میں ماؤں کی گودوں سے بچے چھینے جارہے ہیں۔ محمد علی کے مطابق کراچی پولیس کی کوششوں سے لاپتہ بچوں سے متعلق ایک ہیلپ لائن 1138 اور ویمن پولیس اسٹیشن صدر میں خصوصی ڈیسک قائم کیا گیا ہے اور شہری اس سلسلے میں متعلقہ ہیلپ لائن نمبر اور ڈیسک سے رابطہ کرسکتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں

سندھ اینگرو کول مائننگ کمپنی, کے چیئرمین, خورشید جمالی, گرفتار

سندھ اینگرو کول مائننگ کمپنی کے چیئرمین خورشید جمالی گرفتار

کراچی: نیب کی جانب سے جاری اعلامیے کے مطابق تینوں افراد پر سندھ ٹرانسمیشن اینڈ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے