انڈیا چین کے وزیرِ خارجہ کے ساتھ بات چیت

خیال رہے کہ چین کے وزیر خارجہ وانگ ژی تین روزہ سرکاری دورے پر ان دنوں انڈیا میں موجود ہیں۔

انڈین خبررساں ایجنسی پی ٹی آئی کے مطابق وزیر خارجہ سشما سوراج نے اپنے چینی ہم منصب کے ساتھ ملاقات کی جس کے دوران خارجہ سیکریٹری کی سطح پر باہمی تعلقات کے مختلف پہلوؤں پر بات چیت کے لیے نئے میکنزم پر رضامندی ظاہر کی گئی۔

سشما سوراج نے این ایس جی کی رکنیت کے انڈین دعوے کے متعلق بات کی اور دونوں رہنماؤوں نے اس بات پر رضامندی ظاہر کی کہ جلد ہی اس سلسلے میں اسلحے کی عدم توسیع کے اعلیٰ اہلکاروں کے درمیان ملاقات ہوگی۔

چار گھنٹے تک جاری رہنے والی ملاقات کے دوران سشما سوراج نے پاکستان کے زیر انتظام کشمیر میں چین اور پاکستان کی اقتصادی راہداری کے متعلق ہندوستان کے خدشات کا اظہار بھی کیا۔

انھوں نے دونوں ممالک کے درمیان سرحد کے حالات کا جائزہ لیا اور امن و امان بحال کرنے کے لیے مزید اقدامات پر گفتگو کی۔

خیال رہے کہ جون میں این ایس جی کے 48 ممالک کے اجلاس میں چین نے ہندوستان کی رکنیت کے دعوے کی یہ کہتے ہوئے مخالفت کی تھی کہ انڈیا نے جوہری اسلحے کے عدم پھیلاؤ کے معاہدے پر دستخط نہیں کیے۔

انڈیا کا کہنا تھا کہ چین واحد ملک تھا جس نے اس کی مخالفت کی تھی۔

انڈیا نے جیش محمد کے سربراہ مسعود اظہر کی حوالگی کے بارے میں چینی موقف پرسوال اٹھائے۔

خیال رہے کہ اقوام متحدہ نے جیش محمد کے سربراہ پر پابندی عائد کر رکھی ہے جبکہ چین نے تکنیکی بنیاد پر ان پر پابندی لگا رکھی۔

انڈیا نے کہا کہ چین دہشت گردی کے خلاف اپنے ’زیرو ٹالرینس‘ کے موقف کے تحت از سر نو غور کرے۔

اس سے قبل چینی وزیر خارجہ نے انڈیا کے وزیر اعظم سے بھی ملاقات کی تھی جہاں این ایس جی اور دوسرے اہم امور پر گفتگو کی۔

چین اپنے شہر ہانگ ژاؤ میں ہونے والی جی 20 کی سربراہ کانفرنس اور انڈیا کی ریاست گوا میں ہونے والی برکس کانفرنس کے سلسلے میں انڈیا سے مواصلات اور تعاون میں اضافہ کرے گا جو کہ ترقی پزیر معیشت کی حیثیت اور کردار میں اضافہ ہوگا۔

یہ بھی پڑھیں

ڈرون گرانے کا امریکی دعویٰ جھوٹا ہے، ایران نے ویڈیو جاری کردی

ڈرون گرانے کا امریکی دعویٰ جھوٹا ہے، ایران نے ویڈیو جاری کردی

تہران: امریکا کی جانب سے ایرانی ڈرون گرائے جانے کے صدر ٹرمپ کے دعوے کو …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے