پارٹی ٹرمپ کی مدد کرنا بند کر دے

خیال رہے کہ رواں ہفتے ہی رپبلکن نیشنل سکیورٹی کے 50 ماہرین نے ایک کھلے خط پر دستخط کیے تھے جس میں خبردار کیا گیا تھا کہ صدارتی امیدوار ڈونلڈ ٹرمپ ’امریکی تاریخ کے سب سے لاپروا صدر ہوں گے

ریپلکنز چاہتے ہیں کہ پارٹی سینیٹ اور ایوانِ نمائندگان کے انتخابات میں کمزور امیدواروں کے بجائے اپنے وسائل پر توجہ دے۔

اس خط پر دستخط کرنے والوں (جن میں کانگریس کے سابق اراکین بھی شامل ہیں) نے مسٹر ٹرمپ کی نااہلی، تفریقیت اور ان کی ریکارڈ غیرمقبولیت کے باعث انھیں تنقید کا نشانہ بنایا ہے، اور کہا ہے کہ ان وجوہات کی بنا پر سے نومبر کے انتخابات میں پارٹی ڈوبنے کا خطرہ ہے۔

سینیٹ میں ریپبلکن پارٹی کے سربراہ میچ میکونل نے بھی خدشہ ظاہر کیا ہے کہ سینیٹ میں پارٹی کا کنٹرول بھی خطرے میں پڑ سکتا ہے۔

دوسری جانب ان کی حریف ہلیری کلنٹن نے ٹرمپ پر الزام لگایا ہے کہ وہ ’بے کار‘ باتیں کر رہے ہیں وہ امریکی ہیں اور روسی صدر جیسی بات کر رہے ہیں۔

تاہم ڈونلڈ ٹرمپ جمعرات کو بھی اپنے بیان پر جمے رہے اور انھوں نے مسٹر اوباما اور مسز کلنٹن کو دولتِ اسلامیہ کا ’سب سے اہم کھلاڑی‘ قرار دیا۔

ریپبلکن پارٹی کے امیدوار ڈونلڈ ٹرمپ متنازع بیانات دینے کی وجہ سے دس دن سے لگاتار منفی شہ سرخیوں میں ہیں۔

حال ہی میں ان پر اپنے حامیوں کو تشدد پر اکسانے کا الزام بھی لگا۔

ان کے اس رویے کے باعث کئی ریپبلیکز رہنما پہلے ہی ان کی حمایت نہ کرنے کا عندیہ دے چکے ہیں۔

حالیہ جائزوں سے پتہ چلا ہے کہ ڈونلڈ ٹرمپ کی حمایت میں حالیہ ہفتوں کے دوران بڑے پیمانے پر کمی دیکھنے میں آئی ہے۔

یہ بھی پڑھیں

اقوام متحدہ کو کشمیریوں کو بچانے کیلئے آگے آنا ہوگا، شاہ محمود کا یواین سربراہ کو فون

اقوام متحدہ کو کشمیریوں کو بچانے کیلئے آگے آنا ہوگا، شاہ محمود کا یواین سربراہ کو فون

اسلام آباد: بھارت کے زیر قبضہ کشمیر کی موجودہ صورتحال پر وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے