اسرائیل کو یہودی قومی ریاست قرار دینے کا قانون منظور

مقبوضہ بیت المقدس: اسرائیلی پارلیمنٹ نے ملک کو یہودی ریاست قرار دینے کا قانون منظور کرلیا۔ غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق اسرائیلی پارلیمنٹ نے ملک کو یہودیوں کی قومی ریاست بنانے کا متنازع بل منظور کرلیا۔ بل کے حق میں 62 جبکہ مخالفت میں 55 ووٹ ڈالے گئے۔ اس قانون کے تحت بطور سرکاری زبان عربی کے درجے کو گھٹادیا گیا ہے اور یہودی آبادکاری میں اضافے کو قومی مفاد قرار دیا گیا ہے۔

متنازع قانون میں مقبوضہ بیت المقدس (یروشلم) کو اسرائیل کا مکمل اور متحدہ دارالحکومت تسلیم کیا گیا ہے۔  اسرائیلی پارلیمنٹ کے عرب ارکان نے اس قانون سازی کو شدید تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے اسے جمہوریت کی موت قرار دیا۔ اسرائیل کے وزیراعظم بنیامین نتن یاہو نے بل کو سراہتے ہوئے اس کی منظوری کو’فیصلہ کن لمحہ‘ قرار دیا۔ واضح رہے کہ اسرائیل کی 90 لاکھ آبادی میں سے تقریباً 20 فیصد عرب ہیں جب کہ ملک میں ان کے ساتھ دوسرے درجے کے شہریوں جیسا بدترین سلوک کیا جاتا ہے۔

یہ بھی پڑھیں

امریکی صدر نے سعودی عرب میں اضافی فوجی بھیجنے کی منظوری دے دی

امریکی صدر نے سعودی عرب میں اضافی فوجی بھیجنے کی منظوری دے دی

واشنگٹن: فوجی بھیجنے کا فیصلہ امریکی قومی سلامتی کے اعلیٰ سطح اجلاس میں کیا گیا، …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے