مقبوضہ کشمیرمیں کرفیوکا26واں روز

کرفیو کے باوجود ہزاروں افراد نے بھارتی مظالم کے خلاف احتجاج جاری رکھا ہوا ہے۔

مقبوضہ کشمیرمیں گونجتے نعرے  لے کے رہیں گے آزادی کو جبروطاقت سے دبانے کی بھارتی کوششیں مکمل طور پر ناکام ہوچکی ہے، مسلسل کرفیو، شہادتیں بھی کشمیریوں کے حوصلے پست نہ کرسکیں، چھبیس دن سے نافذ کرفیو سے مقبوضہ وادی میں کھانے پینے کی اشیاء اور دواؤں کی قلت ہوگئی، تعلیمی ادارے، کاروباری مراکز، ٹرانسپورٹ سب بند ہے، مقبوضہ وادی ویرانے کا منظرپیش کرنے لگی۔

بھارتی فوج کی فائرنگ سے حالات مزید کشیدہ ہوگئے ہیں ، بڑی تعداد میں لوگوں نے کرفیو توڑتے ہوئے سرینگر ، بڈگام ، گاندربل ، بانڈی پورہ ، کپواڑہ ، بارہمولہ ، شوپیاں، کولگام، اسلام آباد اور پلوامہ کے اضلاع میں سڑکوں پر نکل کر پاکستان اور آزادی کے حق میں اور بھارت کے خلاف نعرے بلند کئے۔

کرفیو کے باوجود بھارتی دہشت گردی کے خلاف ریلیوں میں کشمیریوں پر پیلٹ گن کا اندھا دھند استعمال کیا جارہا ہے۔

قابض انتظامیہ کی انٹرنیٹ، موبائل سروس بند رکھ کر دنیا کو بے خبررکھنے کی کوشش بھی بے سود رہی، حریت کانفرنس نے بھارتی مظالم کے خلاف پانچ اگست تک ہڑتال کی اپیل کی ہے۔

یہ بھی پڑھیں

تنازعہ کشمیر کی بدولت پورا جنوبی ایشیا ایک ہیجانی کیفیت کا شکار ہے، مسعود خان

صدر آزاد کشمیر سردار مسعود خان نے کہا ہے کہ ڈاکٹر عاصمہ شاکر کی کتاب …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے