اصغر خان کیس میں جماعت اسلامی نے جواب جمع کروا دیا، پیسے لینے کی تردید

اصغر خان کیس میں جماعت اسلامی نے جواب جمع کرواتے ہوئے آئی ایس آئی سے پیسے لینے کی تردید کی ہے۔امیر جماعت اسلامی سراج الحق نے اصغر خان کیس میں سپریم کورٹ میں جواب جمع کرواتے ہوئے 1990 کے انتخابات میں پیسے لینے کی تردید کردی۔ سراج الحق نے کہا کہ جماعت اسلامی نے آئی ایس آئی سمیت کسی سے کبھی رقم نہیں لی، جماعت اسلامی 2007 میں رضاکارانہ طور پر عدالتی کارروائی کا حصہ بنی اور عدالت میں بیان حلفی جمع کرایا کہ اس پر عائد الزامات غلط ہیں۔ سراج الحق نے مزید کہا کہ بطور امیر جماعت اسلامی ہر تحقیقات، کمیشن یا فورم پر پیش ہونے کو تیار ہوں۔

اصغر خان کیس کا پس منظر
1990 میں وزیراعظم بے نظیر بھٹو کی حکومت کو گرانے کے لیے فوج اور آئی ایس آئی نے اسلامی جمہوری اتحاد بنایا تھا اور نواز شریف سمیت متعدد سیاست دانوں کو پیسے دیے تھے۔ یہ پیسے مہران بینک کے مالک یونس حبیب کے ذریعے تقسیم کیے گئے۔ اصغر خان نے سپریم کورٹ میں اس معاملے کی تحقیقات کرانے کیلئے درخواست دائر کی تھی۔

یہ بھی پڑھیں: اصغر خان کیس کا فیصلہ
2012 میں سپریم کورٹ کے چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری کی سربراہی میں 3 رکنی بینچ نے اصغر خان کیس کا فیصلہ سناتے ہوئے 1990ء کے انتخابات میں دھاندلی اور سیاسی عمل کو آلودہ کرنے کا جرم ثابت ہونے پر سابق آرمی چیف جنرل اسلم بیگ اور سابق ڈی جی آئی ایس آئی جنرل اسد درانی کے خلاف وفاقی حکومت کو قانونی کارروائی کرنے کا حکم دیا۔

یہ بھی پڑھیں

انتخابات, میں , کام یابی پر, نریندر مودی کو مبارک باد

انتخابات میں کام یابی پر نریندر مودی کو مبارک باد

اسلام آباد: وزیر اعظم عمران خان نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹویٹر پر مودی …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے