احتساب عدالت کا سوالنامہ، شریف خاندان کیلئے سنگین خدشات

نواز شریف کو دیاگیا سوالنامہ جو 127سوالات پرمشتمل ہے کی اہمیت یہ ہے کہ اگر نواز شریف نے ا ن سوالات کے جواب نہیں دیئے تو ان کو بہت زیادہ نقصان ہوگا ۔ دنیانیوز کے مطابق آئینی ماہرین کاکہنا ہے کہ اس سوالنامے کی واپسی کے بعد اگر وہ ان سوالات کاجواب تسلی بخش نہیں دیتے تو ان پر جرم ثابت ہوجائے گا کیونکہ ثبوت دینے کا بھار نیب پر نہیں بلکہ نواز شریف پر ہے شریف خاندان کی جانب سے یہ کہنا کہ بھار ثبوت نیب پر ہے غلط ہے۔ماہرین کے مطابق اب ڈیل ہونے کا امکان نہیں ہے یہ معاملہ سارا عدالتی ہے اور نیب سپریم کورٹ کے حکم کے مطابق کیس چلا رہی ہے اور عدلیہ کسی کے ساتھ اس معاملے میں ڈیل نہیں کر سکتی ۔

یہ بھی پڑھیں

افغانستان کو عالمی دہشت گردی کا محرک نہ بننے دینے کی ضمانت

افغانستان کو عالمی دہشت گردی کا محرک نہ بننے دینے کی ضمانت

پشاور: قطر کے دارالحکومت دوحہ میں امریکا کے ساتھ ہونے والے مذاکرات کے نویں دور …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے