پاکستان نے امریکہ کے جواب میں انکے سفارت کاروں کی سرگرمیاں محدود کی ہیں، خرم دستگیر

اسلام آباد: وفاقی وزیر خارجہ خرم دستگیر کا کہنا ہے کہ پاکستان میں امریکی سفارت کاروں کی سرگرمیاں محدود کرنا جوابی اقدام ہے۔ نجی ٹی وی کے ٹاک شو میں گفتگو کرتے ہوئے وزیر خارجہ خرم دستگیر نے کہا کہ پاکستانی سفارت کاروں پر امریکی پابندیاں صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی اسلام آباد پر دباؤ ڈالنے کی پالیسی کا حصہ ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ پاکستان اور امریکا کے درمیان اس وقت ورکنگ سطح پر بات چیت نہیں ہو رہی جس کی وجہ سے یہ تناؤ پیدا ہوا ہے۔ واضح رہے کہ امریکا میں پاکستانی سفارت کاروں پر سفری پابندی کے جواب میں پاکستان نے بھی امریکی سفارت کاروں پر پابندیاں لگادی ہیں، جس کا اطلاق فوری طور پر ہوگا۔

گذشتہ روز دفتر خارجہ کی جانب سے جاری کیے گئے نوٹیفکیشن کے مطابق امریکی سفارت کاروں کو بھی نقل و حرکت سے پہلے دفتر خارجہ سے اجازت لینا ہوگی۔ نوٹیفکیشن میں کہا گیا کہ امریکی سفارت کار ایک سے زائد پاسپورٹ نہیں رکھ سکیں گے اور ان کا قیام جاری ہونے والے ویزے کی مدت کے مطابق ہوگا۔ دفتر خارجہ کے نوٹیفکیشن کے مطابق امریکی سفارتخانے کی آفیشل گاڑیوں پر نان ڈپلومیٹک نمبر پلیٹ کی اجازت نہیں ہوگی اور کرائے کی عمارتوں کے حصول اور تبدیلی کے لیے بھی این او سی لینا ہوگا۔ دوسری جانب امریکی سفارتخانے کی اپنی اور کرائے پر لی گئی گاڑیوں پر کالا شیشہ لگانے کی اجازت بھی نہیں ہوگی جبکہ سفارت کاروں کے لیے بائیو میٹرک تصدیق کے بغیر فون سمز جاری نہیں کی جائیں گی۔

یہ بھی پڑھیں

چوہدری محمد سرور نے کہا ہے کہ بھارتی جارحیت بےنقاب ہوچکی

چوہدری محمد سرور نے کہا ہے کہ بھارتی جارحیت بےنقاب ہوچکی

اسلام آباد: مذہب اور عقیدے کی بنیاد پر ظلم کے شکار افراد کے عالمی دن …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے