قائمہ کمیٹی برائے خزانہ میں موبائل فون پر لیوی ٹیکس لگانے کی حکومتی تجویز مسترد

اسلام آباد:  سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے خزانہ نے موبائل فون پر لیوی ٹیکس لگانے کی تجویزمسترد کردی۔ سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے خزانہ نے حکومت کی جانب سے موبائل فون پر لیوی ٹیکس لگانے کی اور پاکستانی کریڈٹ کارڈ یا ڈیبٹ کارڈ کے ذریعے بیرون ممالک میں رقم کے استعمال پر ود ہولڈنگ ٹیکس عائد کرنے کی تجاویزمستردکر دیں۔

قائمہ کمیٹی برائے خزانہ نے 1000سی سی سے زیادہ کی گاڑی کی خریداری، 10 مرلے سے زیادہ کارہائشی پلاٹ خریدنے اورکمرشل جائیداد کی خریداری کے لیے ٹیکس فائلرز کی شرط لازمی قراردینے کی تجویز منظور کرلی،بینکوں سے 24 گھنٹے میں 50ہزار روپے کی ٹرانزکشن پر ٹیکس لگانے کی بجائے ایک لاکھ کی ٹرانزکشن پر ٹیکس لگانے کی تجویز منظور کرلی۔

ایف بی آر حکام نے کمیٹی نے مزید آگاہ کیا کہ کارپوریٹ سیکٹر پر ٹیکس کی موجودہ شرح 29فیصد ہے جسے مرحلہ وار کم کر تے ہوئے 2023تک25فیصد کر دیا جائے گا ۔

یہ بھی پڑھیں

جولائی میں ملکی برآمدات میں 14 فیصد اضافہ ہوا

اسلام آباد: رواں سال جولائی میں ملکی برآمدات میں 14 فیصد اضافہ ہوا، ملکی برآمدات …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے