لاہور : ہائیکورٹ میں لو میرج کرنیوالی لڑکی پر گھروالوں نے دھاوا بول دیا

لاہور:لاہور ہائیکورٹ میں لو میرج کرنے والی لڑکی پر اس کے گھر والوں نے دھاوا بول دیا ہائیکورٹ کےسکیورٹی اہلکاروں نے زبردستی ساتھ لےجانے کی کوشش ناکام بنادی ۔

تفصیلات کےمطابق لاہور ہائیکورٹ کے روبرو مقامی شہری وقاص کی اخراج مقدمے کی درخواست پر سماعت ہوئی ۔۔پسند کی شادی کرنے والی لڑکی ثمینہ نے عدالت میں بیان دیا کہ اس کو درخواست گزار وقاص نے اغوا نہیں کیا بلکہ اس نے اپنی مرضی سے شادی کی ہے۔ پولیس نے عدالت کو بتایا کہ لڑکی کے بیان پر درخواست گزار وقاص کے خلاف مقدمہ خارج کر دیا گیا ہے۔ ہائیکورٹ نے درخواست نمٹاتے ہوئے لڑکی کو اس کے شوہر کے ساتھ جانے کی اجازت دے دی۔ کمرہ عدالت سے باہرنکلتے ہی لڑکی کے گھروالوں نے اس پردھاوا بول دیااورزبردستی ساتھ لے جانے کی کوشش کی ، ہائیکورٹ کے سکیورٹی اہلکاروں نے مداخلت  کرتے ہوئے لڑکی کو اس کے شوہرکےساتھ بھیج دیا۔

 

یہ بھی پڑھیں

پنجاب بھر کی جیلوں میں کرونا وائرس کی اسمارٹ سیمپلنگ کا فیصلہ

پنجاب بھر کی جیلوں میں کرونا وائرس کی اسمارٹ سیمپلنگ کا فیصلہ

لاہور:انسپکٹر جنرل (آئی جی) جیل مرزا شاہد سلیم بیگ کا کہنا ہے کہ محکمہ پرائمری …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے