پاکستان کا بینکنگ نظام آئندہ صرف ڈیڑھ برس تک مستحکم رہے گا :موڈیز کا ایسا انکشاف کہ پاکستانی سر پکڑ کے بیٹھ جائیں

اسلام آباد: عالمی کریڈٹ ریٹنگ ایجنسی موڈیز انویسٹرز سروس نے پاکستان کے بینکنگ سسٹم آؤٹ لک (بی تھری) کے حوالے سے دعویٰ کیا ہے کہ وہ آئندہ ڈیڑھ سال تک مستحکم رہیں گے تاہم معاشی ترقی کی شرح کو سیاسی عدم استحکام سے مشروط قرار دیا ہے۔موڈیز کی رپورٹ کے مطابق معاشی ترقی اور مستحکم فنڈنگ سے آؤٹ لک بہتر رہا تاہم اس دوران کم شرح منافع پر حکومتی بانڈز خریدنا، غیر مؤثر سرمایہ کاری اور ہائی رسک اثاثوں کے باعث بینکوں کو چیلنجز کا سامنا ہو سکتا ہے۔واضح رہے کہ رواں برس کے آغاز میں عالمی بینک نے پیش گوئی کی تھی کہ مالی سال 18۔2017 میں پاکستان کی اقتصادی ترقی کی شرح 5.5 فیصد تک بڑھے گی اور سال کی درمیانی مدت تک مضبوط مقامی کھپت، بڑھتی ہوئی سرمایہ کاری اور برآمدات کی بحالی سے اس کا اوسطاً 5.9 فیصد تک پہنچنے کا امکان ہے۔رپورٹ میں خبر دار کیا گیا تھا کہ مقامی سطح پر مالی تاخیر سمیت انفرا اسٹرکچر منصوبوں سے متعلق واجبات میں اضافہ، آئندہ عام انتخابات میں تاخیر اور محصولات کی کمزور آمدنی، مالی استحکام کی کوششوں کو نقصان پہنچا سکتے ہیں۔موڈیز انوسیٹرز سروس کے سینئر نائب صدر رکریپروس نے کہا کہ پاک چین اقتصادی راہداری (سی پیک) منصوبوں اور داخلی سطح پر طلب میں اضافے سے پاکستان کی معیشت میں بہتری نظر آئی جس کے باعث اگلے 12 سے 18 ماہ میں مزید بہتری کے امکانات ہیں۔عالمی کریڈٹ ریٹنگ ایجنسی کے مطابق مالی سال 19۔2018 کے آخر تک جی ڈی پی گروتھ یا شرح نمو 5.5 فیصد سے بڑھ کر 5.6 ہو جائے گی۔انفراسٹرکچر میں فنڈز کی فراہمی اور مقامی سرمایہ کاری دو اہم امور ہیں جس کے باعث گروتھ میں 12 فیصد سے 15 فیصد اضافہ 2018 میں ہوا۔رپورٹ میں کہا گیا کہ سیاسی بحران اور خراب داخلی سیکیورٹی کے باعث معیشت کو دھچکا لگ سکتا ہے۔موڈیز کے نائب صدر اور سینئر کریڈٹ آفیسر ولیم فاسٹر کے مطابق مستحکم آؤٹ لک کریڈٹ پروفائل کے مختلف رسک میں توازن کو ظاہر کرتا ہے۔انہوں نے کہا کہ دوطرفہ اور وسیع تر معاونت سے پاکستان کے غیرملکی زرمبادلہ کے ذخائر بڑھے ہیں اور اقتصادی اصلاحات میں تیزی آئی ہے۔

یہ بھی پڑھیں

ایشیائی ترقیاتی بینک سے 50 کروڑ ڈالر ملنے پر زرمبادلہ ذخائر بڑھے ہیں

ایشیائی ترقیاتی بینک سے 50 کروڑ ڈالر ملنے پر زرمبادلہ ذخائر بڑھے ہیں

کراچی: اسٹیٹ بینک پاکستان کی جانب سے جاری اعلامیے میں بتایا گیا ہےکہ زرمبادلہ کے …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے