اسلام آباد دھرنا، مظاہرین وزیر قانون زاہد حامد کے فوری استعفیٰ کے مطالبے سے دستبردار

اسلام آباد: فیض آباد میں جاری دھرنے کے خاتمے کے حوالے سے اہم پیش رفت سامنے آئی ہے اور مظاہرین وزیر قانون زاہد حامد کے فوری استعفیٰ کے مطالبے سے دستبردار ہوگئے ہیں۔ تفصیلات کے مطابق فیض آباد دھرنے کے مسئلے کے حل کے لیے بنائی گئی، مذاکراتی کمیٹی نے تحریک لبیک کے رہنماؤں سے مذاکرات کے بعد سفارشات حکومت کو بھجوادی ہیں۔ ذرائع کے مطابق دھرنا مظاہرین وزیر قانون زاہد حامد کے فوری استعفیٰ کے مطالبے سے پیچھے ہٹ گئے ہیں۔ تحریک لبیک کا موقف ہے کہ ہم زاہد حامد کو مرکزی ملزم نہیں مانتے، تاہم ختم نبوت ترمیم کی تحقیقات کرنے والی راجہ ظفرالحق رپورٹ منظر عام پر آنے تک وزیر قانون اپنا کام روک دیں، تو ہم دھرنا ختم کردیں گے۔ وزارت مذہبی امور نے پیر حسین الدین شاہ کی کمیٹی کی رپورٹ وزیرداخلہ کو ارسال کردی ہے۔ وزارت مذہبی امور نے جید علماء پر مشتمل یہ مذاکراتی کمیٹی گزشتہ روز تشکیل دی تھی، جس میں پیر حسین الدین، ڈاکٹر ساجد الرحمن، پیر ضیاء الحق شاہ، مولانا عبدالستار سعیدی اور پیر نظام الدین جامی شامل ہیں۔ واضح رہے کہ کاغذات نامزدگی کے حلف نامے میں ختم نبوت کی شق سے متعلق ترمیم کے خلاف اسلام آباد میں 17 روز سے دھرنا جاری ہے اور مظاہرین ترمیم کے ذمہ دار افراد کے خلاف کارروائی کا مطالبہ کررہے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں

سائبر کرائم میں شہریوں کی شکایتوں پر سست روی سے کام کرنا کیوں مشکل ہورہا ہے

سائبر کرائم میں شہریوں کی شکایتوں پر سست روی سے کام کرنا کیوں مشکل ہورہا ہے

اسلام آباد: سینٹرز کے امور ڈپٹی ڈائریکٹر چلارتے ہیں، سی سی آر سیز ایک زون …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے