گلگت بلتستان میں40 ہزارمیگاواٹ پن بجلی پیداوارکی صلاحیت

اسلام آباد:  گلگت بلتستان میں 40 ہزارمیگاواٹ ہائیڈروپاورجنریشن کی صلاحیت موجود ہے جس کوحاصل کرنے کیلیے مناسب منصوبہ بندی کے تحت سرمایہ کاری کی جائے توسالانہ2163 ارب روپے کی خطیرآمدن ہوسکتی ہے۔

سرکاری دستاویزکے مطابق جرمنی کی کمپنی جی ٹی زیڈاورواپڈانے گلگت بلتستان کے چھوٹے دریاؤں اورندیوں پرہائیڈرو پاور جنریشن کیلیے مجموعی طورپر122 مخصوص مقامات کی نشاندہی کی تھی جن پر پروجیکٹ لگاکر کل772 میگاواٹ بجلی پیداکی جاسکتی ہے، اسکے علاوہ واپڈانے دریائے سندھ پر6 مقامات پر ڈیم تعمیرکرنے کی نشاندہی کی تھی جس سے مجموعی طورپر18 ہزار 720 میگاواٹ بجلی پیدا کی جاسکتی ہے۔

ان میں دیامیربھاشا کے مقام پرڈیم کی تعمیرسے4 ہزار500 میگاواٹ، بونجی میں ڈیم کی تعمیرسے7 ہزار100 میگاواٹ، یولبوپرڈیم تعمیر کر کے2ہزار800 میگاواٹ، تنگوس کے مقام پرڈیم تعمیرکرکے2ہزار200 میگاواٹ، سکردومیں ڈیم کی تعمیر سے1 ہزار600 میگاواٹ جبکہ یوگومیں ڈیم کی تعمیر سے 520 میگاواٹ بجلی کی پیدوارشامل ہے۔دستاویزکے مطابق گلگت بلتستان حکومت میں بجلی کی لائن لاسزاورضرورت کے مطابق بجلی کااستعمال یقینی بنانے کیلیے32 کے وی کاریجنل گرڈ اسٹیشن بنانے کامنصوبہ بنایاگیاہے جس پر25 ارب روپے لاگت آئے گی۔

یہ بھی پڑھیں

ایک ہزار 6 سو پولیو ورکرز مراعات, و پینشن کا تنازع حل نہ, ہونے پر, پولیو مہم کا, بائیکاٹ

ایک ہزار 6 سو پولیو ورکرز مراعات و پینشن کا تنازع حل نہ ہونے پر پولیو مہم کا بائیکاٹ

گلگت بلتستان :ملک بھر کی طرح گلگت بلتستان میں چار روزہ انسداد پولیو مہم کا …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے