جمہوریت پہ بات کریں تو غدار، ناانصافی پہ کریں تو توہین عدالت کا الزام لگتا ہے، مریم نواز

اسلام آباد:  سابق وزیراعظم نواز شریف کی بیٹی مریم نواز کا کہنا ہے کہ پہلے فیصلہ کرلیا جاتا ہے پھر مقدمات چلائے جاتے ہیں۔ اسلام آباد کی احتساب عدالت میں پیشی کے بعد میڈیا سے بات کرتے ہوئے مریم نواز نے کہا کہ ثبوت دیے نہیں جا رہے بلکہ ثبوت بنائے جارہے ہیں، پہلے فیصلہ کرلیا جاتا ہے پھر مقدمات چلائے جاتے ہیں۔ نواز شریف کی اہلیہ کو کینسر ہے اور لندن میں زیر علاج ہیں، نواز شریف کی نااہلی اقامہ کی بنیاد پر ہوئی، کیا سارا قانون نواز شریف کے لیے ہے۔ جلد بازی صرف ایک خاندان اور منتخب وزیراعظم کے لیے ہی کیوں، جمہوریت پر بات کریں تو غدار اور ناانصافی پر بات کریں تو توہین عدالت کا الزام لگتا ہے۔ صحافی کی جانب سے جب سوال کیا گیا کہ کیا آپ کی حکومت پرویز مشرف کے ریڈ وارنٹ جاری کرے گی، جس پر مریم نوازنے تلخ لہجے میں کہا کہ ہماری حکومت، ہماری حکومت! بس اس پراب خاموش رہنا بہتر ہے، اتنے سادہ آپ بھی نہیں اور میں بھی نہیں، آپ کو پتا ہے اصل بات کیا ہے۔ نواز شریف کے ساتھ امتیازی سلوک کے معاملے پر سوال کا جواب دیتے ہوئے مریم نواز نے کہا کہ نواز شریف باربار لندن سے آکر پیش ہو رہےہیں، کیا اسے آپ وی آئی پی احتساب کہتے ہیں، وی آئی پی احتساب اس وقت ہوتا ہے جب عدالت کے راستے سے گاڑی واپس چلی جاتی ہے، ایک شخص کو محفوظ راستہ دلوانے کےلیے دھرنے دیے جاتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں

سرحدوں پر خطرات ہیں، غیر اعلانیہ جنگ شروع ہو چکی: شیخ رشید

سرحدوں پر خطرات ہیں، غیر اعلانیہ جنگ شروع ہو چکی: شیخ رشید

وزیر ریلوے شیخ رشید احمد نے شہباز شریف کو اپنا اچھا دوست قرار دیتے ہوئے …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے