ہماری نظروں کے سامنے فوجیوں نے مسلمان بچوں کے سرکاٹ دیئے، داستان ظلم کے عینی شاہدین

برما: میانمر کے روہنگیا مسلمانوں کے ساتھ سفاک برمی فوجی کیا سلوک کر رہے ہیں، آپ نے اس کے متعلق بہت کچھ سن لیا ہو گا یا شاید ہم میں سے کسی نے بھی ابھی تک کچھ بھی نہیں سنا۔ نیویارک ٹائمز کی ایک رپورٹ میں اس ظلم کا کچھ ایسا حال بیان کیا گیا ہے کہ جسے جان کر انسان تو کیا پتھر بھی لرز اٹھیں۔ روہنگیا مسلمانوں کے ساتھ پیش آنے والے لرزہ خیز واقعات بنگلا دیش پہنچنے والے پناہ گزینوں نے بیان کرتے ہوئے بتایا، ” ہم نے میانمر کے فوجیوں کو دیکھا کہ وہ ننھے بچوں کے جسموں میں خنجر گھونپ رہے تھے اور ان کے سروں کو کاٹ رہے تھے۔ وہ کمسن لڑکیوں کو سب کے سامنے اجتماعی زیادتی کا نشانہ بنارہے تھے۔ ہم نے ان فوجیوں کو گھروں میں گرنیڈ پھینکتے ہوئے دیکھا، جبکہ پورے کے پورے خاندان جلا کر انہوں نے راکھ کردئیے ہیں۔ نوجوان روہنگیا مسلمانوں کو بڑی تعداد میں اکٹھے کرکے اجتماعی طور پر قتل کیا جا رہا ہے۔“ راجومہ نامی ایک نوجوان مسلمان لڑکی نے اپنے ساتھ پیش آنے والے لرزہ خیز واقعات کے بارے میں بتایا ”سفاک فوجیوں نے میرے بازوﺅں سے میرا بچہ چھین کر آگ میں پھینک دیا۔ پھر وہ مجھے کھینچ کر ایک گھر میں لے گئے اور متعدد فوجیوں نے مجھے اجتماعی زیادتی کا نشانہ بنایا۔ میرا شوہر، بھائی، دو بہنیں اور ماں باپ، سب انہوں نے قتل کر دئیے۔“

یہ بھی پڑھیں

بھارت میں جنسی زیادتی میں ملوث رکن اسمبلی نے خود کو پولیس کے حوالے کردیا

اتر پردیش:  جنسی زیادتی میں ملوث سماج پارٹی کے رکن اسمبلی اٹل رائے نے خود …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے