اصلاحات میں تاخیر، فاٹا پارلیمنٹرینز کا قومی اسمبلی کے سامنے دھرنا دوسرے روز بھی جاری

اسلام آباد: فاٹا اصلاحات کو التواء میں ڈالنے کے خلاف قومی اسمبلی کے سامنے فاٹا پارلیمنٹرینز کا احتجاجی دھرنا آج دوسرے روز بھی جاری رہا۔ جس میں الحاج شاہ جی گل، شہاب الدین خان، ناصر جمال، سینیٹر ہدایت الرحمن اور سینیٹر عبدالرحمن نے شرکت کی۔ اس موقع پر ان کا کہنا تھا کہ اسمبلی میں توجہ نہ ملنے پر ایوان کے باہر احتجاج پر مجبور ہو ئے ہیں۔ انہوں نے مطالبہ کیا کہ فاٹا کو جلد از جلد خیبر پختونخوا میں شامل کرکے سپریم کورٹ اور پشاور ہائی کورٹ کا دائرہ اختیار ان قبائلی علاقوں تک بڑھایا جائے۔ انہوں نے فاٹا کو این ایف سی ایوارڈ میں حصہ دینے کا بھی مطالبہ کیا۔ دو روز میں مختلف سیاسی جماعتوں کے ارکان قومی اسمبلی اور سینٹ نے کیمپ میں فاٹا کے پارلیمنٹرینز سے اظہار یکجہتی کیا اور انہیں اپنی بھرپور حمایت کا یقین دلایا۔

یہ بھی پڑھیں

پہلی بار, وانا میں, پولیس اسٹیشن قائم , کردیا, گیا

پہلی بار وانا میں پولیس اسٹیشن قائم کردیا گیا

وانا: قبائلی اضلاع کے خیبر پختونخوا میں انضمام کے بعد جنوبی وزیرستان وانا میں پولیس …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے