آصف زرداری کی احتساب عدالت سے بریت کی مذمت کرتا ہوں، عمران خان

لاہور: پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان کا کہنا ہے کہ غیرقانونی اثاثہ جات ریفرنس میں آصف علی زرداری کی بریت میثاق جمہوریت کے مک مکا کا ثبوت ہے۔ لاہور میں میڈیا کے نمائندوں سے بات کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ وہ آصف زرداری کی نیب کیسز سے بریت کی مذمت کرتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ آصف زرداری کی اربوں روپے کی جائیداد بیرون ملک پڑی ہے، زرداری کی بریت کے خلاف پوری قوم کو آواز اٹھانی چاہیے جبکہ اگر سپریم کورٹ کے ماتحت جے آئی ٹی نہ بنتی تو نواز شریف بھی بری ہو چکے ہوتے۔ جب عمران خان سے پوچھا گیا کہ احتساب عدالت نے آصف زرداری کو بری کیا ہے تو وہ کیوں اسے تسلیم نہیں کر رہے تو انہوں نے جواب دیا کہ سپریم کورٹ نے چیئرمین نیب پر عدم اعتماد کا اظہار کیا تھا اور جس نیب پر سپریم کورٹ کو اعتماد نہیں اس کے فیصلے کیسے مان لیں۔ انہوں نے کہا کہ ہم چاہتے ہیں کہ اداروں کو مضبوط کیا جائے، جمہوریت میں ریاستی ادارے کسی سے ڈکٹیشن نہیں لیتے، جب تک ادارے مضبوط نہیں ہوں گےحقیقی جمہوریت نہیں آئے گی۔

عمران خان نے این اے 120 کے ضمنی الیکشن کے حوالے سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ این اے 120 کا الیکشن پاکستانیوں کے لیے ٹیسٹ کیس ہے، اس انتخاب میں یہ فیصلہ ہوگا کہ ملک میں قانون کی بالادستی ہوگی یا ڈاکو راج۔ عمران خان نے کہا کہ یاسمین راشد کا مقابلہ کلثوم نواز کے ساتھ نہیں بلکہ ریاست کے ساتھ ہے، مریم نواز حلقے میں انتخابی مہم چلا رہی ہیں اور انہوں نے وزیراعلیٰ ہاؤس میں اجلاس طلب کیا، ریاست کے وسائل استعمال ہو رہے ہیں الیکشن کمیشن کیوں نہیں دیکھ رہا؟۔ چیئرمین تحریک انصاف نے کہا کہ یہ کیسی جمہوریت ہے کہ جہاں ایک پارٹی کے چیئرمین کو انتخابی مہم میں حصہ لینے کی اجازت نہیں، اس سلسلے میں عدالت سے رجوع کیا ہوا ہے۔

یہ بھی پڑھیں

اپوزیشن اپنا تعمیری کردار ادا نہیں کر رہی

اپوزیشن اپنا تعمیری کردار ادا نہیں کر رہی

لاہور: راجہ بشارت نے کہا کہ پروڈکشن آرڈر جاری کرنا اسپیکر کا اختیار ہے جن …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے